Tamam Raat Sitaru Se Baat Rehti Thi | Tehzeb Hafi Urdu Hindi poetry

Tamam Raat Sitaru Se Baat Rehti Thi | Tehzeb Hafi Urdu Hindi poetry
Tamam Raat Sitaru Se Baat Rehti Thi | Tehzeb Hafi Urdu Hindi poetry  

 


تہذیب ؔحافی

تازہ غزل

تما م رات ستاروں سے بات رہتی تھی

Taman rat sitaroon sy baat rehti thi

کہ صُبح ہوتے ہی گھر سے پُھول آتے تھے

K subhu hotey hi ghar se phool atey thy

وہ کس کے نقش اُبرتے تھے تیغ پر اپنی

Woh kis k naqsh ubhartey thy tegh pr apni

وہ کس خیال میں ہم جنگ جیت جاتے تھے

Woh kis khital mein hum jung jeet jatey thy

ہمیں بھی قحط میں اَک چشمِ زر میسر تھی

Hamein bhi qehhat mein ik chasm e zar miyassar thi

کوئی ہتھیلیاں بھر بھر کے مئہ پلاتا تھا

Koi hathiliaan bhar bhar k meh pilata tha

بھرا ہوا تھا سمندر انہی خزانوں سے

Bhara hua tha sumandar inhi khazanoon se

نکال لیتے تھے جو خواب راس آتا تھا

Nikaal letey thy jo khuwab raas ata tha

وہ میرے ساتھ رہا کرتا خوش دلی سے بہت

Woh mere saath raha karta kushdilli sey buhat

کہ اُن دِنوں میرا دُنیا پہ ہاتھ پڑتا تھا

K un dino mira duniya po haath partatha

ہما ری جیب بھری رہتی داستانوں سے

Hamari jaib bharirehti dastanoon sy

ہمیں خیال کا جنگل بھی ساتھ پڑتا تھا

Hamein khiyal ka jungle bhi saath parta tha

وہ سارے دن کا تھکا خوب گاہ میں آتا

Woh sarey din ka thaka khuwab gah mein ata

تھپک تھپک کے سُلاتا تو ہاتھ سو جاتے

Thapak thapak k sulata tu haath so jatey

نسیمِ صُبح کسی لہر میں جگاتی ہمیں

Naseem e subha kissi lehar mein jagati hamein

اور اُٹھتے اُٹھتے ہمیں دن کے ایک ہو جاتے

Aor uthtey uthtey hamein din k aik ho jatey

سروں سے کھینچ لیا وقت نے وفا کا لحاف

Saroon sey khinch lia waqt ney wafa ka lihaaf

وہ پردے اُٹھ گئے جو طاعنات رہتے تھے

Woh pardey uth gye jo tainaat rehtey thy

بچھڑ گیا ہے وہ سنگین موسموں میں کہیں

Bichar gya hai who sangheen mousmoon mein kahin

وہ میرے دل پہ صدا جس کے ہاتھ رہتے تھے

Woh mere dil pey sada jis k haath rehtey thy

وہ بوئے گل مجھے جس گلستاں میں لای تھی

Woh boegul mujhe jis gulistaan mein lai thi

وہاں پہ جا کے بھی اُس کا نشان دیکھ لیا

Wuhan pey ja k bhi uss ka nishaan dikh lia

یہ شاخِ وصل دوبارہ ہری نہیں ہوتی

Yeh shakhe wasil dobara hari nohi hoti

ہوائے ہجر نے میرا مکان دیکھ لیا

Huwey hijjar ne mera makaan dekh lia

وہ اَبر جس کی تگ و دو میں جسم سوکھ گئے

Woh ubar jis ki tag o dho mein jism such gye

دوبارہ چھت پہ ہے اور چھت پہ سیڑھی جاتے ہے

Dobara chhat pey hai aor chhat pey shehri jati hai

ٹھہر ٹھہر کے میں اُس سمت ایسے جارہا ہوں

Thehar thehar k mein us simt aisey ja rha hoon

کہ جیسے حاملہ عورت قدم اُٹھاتی ہے

K jaisey hamla aurat qadam uthathi hai

یہ زہر بادائے عشرت ہے اور دے میرے رب

Yeh zeher badaey essharat aor dey mere rab

وہ پھر چلا گیا میں پھر زمیں چاٹوں گا

Woh phir chala gya mein phr zameen chatoon ga

میں پھر سے ہاتھ میں تیشہ اُٹھائے سوچتا ہوں

Main phir sey haath mein tehsa uthae suchta hoon

میں کو ہ کن وہی خوش خط پہاڑ کاٹوں گا

Woh khokan wohi kush khat pahar katoon ga

بدن کی برف پگھلنے کے بعدپوچھیں گے

Badan ki barf pighalney k baad pochein gein

بہت پتہ ہے تحمل کے ساتھ بہتے ہو

Buhat pata hai tahamal k saath behtey ho

ازل کے ہاتھ پہ کھینچی ہوئی صلے کی لکیر

Azzal k haath pey khinchi hui siley ki lakeer

کسی سے پہلے مِٹی ہے جو مجھ سے کہتے ہو

Kissi sy phele mitti hai jo mujh sy kehty ho

 

TEHZEEB HAFI


FOR MORE OF TEHEEB HAFI



Post a Comment

0 Comments