Tum Nahi Janti By Tehzeeb Hafi

Tum Nahi Janti By Tehzeeb Hafi
Tum Nahi Janti By Tehzeeb Hafi




تو نہیں جانتی

تیرے ہونٹوں سے بہتی ہوئی یہ ہنسی

دو جہانوں پہ نافذ نہ ہونے کا باعث تیرے ہاتھ ہیں

جن کو تو نے ہمیشہ لبوں پہ رکھا مسکراتے ہوئے

تو نہیں جانتی نیند کی گولیاں کیں بنائی گئیں

لوگ کیوں رات کو اُٹھ کے روتے ہیں سوتےنہیں

تو نے اب تک کوئی شب جاگتے بھی گزاری تو وہ بار بی نائٹ تھی

تجھ کو کیسے بتاؤں کہ تیری صدا کے تعاقب میں  میں کیسے

دریاؤں صحراؤں اور جنگلوں سے گزرتا ہوا ایک ایسی جگہ جا گرا تھا

جہاں پیڑ کا سوکھنا ایک عام سی بات تھی

جہاں ان چراغوں کو جلنے کی اُجرت نہیں مل رہی تھی

جہاں لڑکیوں کے بدن صرف خوشبو بنانے کے کام آتے تھے

مجھ کو معلوم تھا تیرا ایسے جہاں ایسی دُنیا سے کوئی تعلق نہیں

تو نہیں جانتی کتنی آنکھیں تجھے دیکھتے دیکھتے بُجھ گئیں

کتنے کُرتے تیرے ہاتھ سے استری ہو کے جلنے کی خواہش میں کھونٹی سے لٹکے رہے

کتنے لب تیرے ماتھے کو ترسے

کتنی شاہرائیں اس شوق سے پٹ گئی ہیں کہ تو اُن کے سینے پہ پاؤں دھرے

میں تجھے ڈھونڈتے ڈھونڈتے تھک گیا ہوں

اب مجھے تیری موجوگی چاہیے ہے

اپنے ساٹن میں سہمے ہوئے سُرخ پیروں کو اب میرے ہاتھوں پہ رکھ

میں نے چکنا ہے ان کا نمک

 

 

تہذیب ؔحافی

 

Tere hontoon se behti hui yeh hansi

Do jahanoon pe nafiz na honey ka bais tere hath hain

Jin ko tu ne hamesha laboon pe rakha muskaratey huey

Tu nahi janti neend ki goliaan kyun banai gain

Log kyun raat ko uth k rotey hain sotey nahi

Tu ne ab tak koi shab jagtey bhi ghuzari tu woh bar b night thi

Tujh ko kaise bataoon k teri sada k taqub mein main kaisey

Daryioon sehraoon aor jungloon sey ghuzarta hua aik aisi jagha ja gira tha

Jahan pair ka sokhna aik aam c baat thi

Jahan in chiraghoon ko jalney ki ujrat nahi mil rhi thi

Jahan larkioon k badan sirf khusb bananey kaam atey thy

Mujh ko maloom that tera aisey jahan aisi dunya se koi taluq nahi

Tu nahi janti kitni anhkein tujhe dekhtey dekhtey bujh gain

Kitney kurtey tere hath se istri ho k jalney ki khuwais liye khonthi sey latkey rhe

Kitney lab tere mathey ko tarsey

Kitni sharaein is shouq se phat gain hain k tu un k seeney pe paoon dharey

Main tujhe dhontey dhontey thak gya hoon

Ab mujhe teri mojodghi chahiye

Apney satan mein sehmey huey surkh peroon ko ab mere haathoon pe takh

Main ne chakna hai in ka namak

 

TEHZEEB HAFI

 

 

Post a Comment

0 Comments