Trending

Ek Zakham Bhi Yaran-E-Bismil Nahi Aane Ka Jaun Elia Urdu Hindi Poetry

 Ek Zakham Bhi Yar En Bismil Nahi Aney Ka

Muktil Main Parey Raheye Katil Nahi Aney Ka

Ab Koch Karo Yaro Sehra Se Keh Suntey Hain

Sehra Ma Ab  Ainda Mahmil Nahi Aney Ka

Waaz Ko Kharabey Ma Ek Dawat Haq Di Thi 

Ma Jan Raha Tha Wo Jahil Nahi Aney Ka

Buniyad Jahan Pehle Ju Thi Wohi Ab Bhi Ha

Yun Hashar Tu Yar En Yak Dil Nahi Aney Ka 

Boot Ha Keh Khuda Ha Wo Mana Ha Na Manu Ga

Es Shokh Se Jab Tak Ma Khud Mil Nahi Aney Ka

Gar Dil Ki Ye Mahfil Ha Khacha Bhi Ho Phir Dil Ka 

Bahir Se Tu Saman Mahfil Nahi Aney Ka

Wo Naaf Peyaley Se Sarmat Karey Warna 

Ho Keh Main Kabhi Es Kayel Nahi Aney Ka



اک زخم بھی یار ان بسمل نہیں آنے کا

مقتل میں پڑے رہیے قاتل نہیں آنے کا

اب کوچ کرو یارو صحرا سے کہ سنتے ہیں

صحرا میں اب آئیندہ محمل نہیں آنے کا

واعظ کو خرابے میں اک دعوت حق دی تھی

میں جان رہا تھا وہ جاہل نہیں آنے کا

بنیاد جہاں پہلے جو تھی وہی اب بھی ہے

یوں حشر تو یار ان یک دل نہیں آنے کا

بت ہے کہ خدا ہے وہ مانا ہے نہ مانوں گا

اس شوخ سے جب تک میں خود مل نہیں آنے کا

گر دل کی یہ محفل ہے خرچہ بھی ہو پھر دل کا

باہر سے تو سامان محفل نہیں آنے کا

وہ ناف پیالے سے سر مست کرے ورنہ

ہوکے میں کبھی اس کا قائل نہیں آنے کا




Post a Comment

Previous Post Next Post